Top 10 similar words or synonyms for آخوند

گنگوہی    0.790074

عبدالغفور    0.773694

شیرازی    0.762987

زادہ    0.759065

تھانوی    0.758741

سہارنپوری    0.758016

سرہندی    0.757452

الحاج    0.749660

مجددی    0.747294

قدس    0.744066

Top 30 analogous words or synonyms for آخوند

Article Example
آخوند مذہبی تعلیم دینے والا، معلم، استاد، فقہی اور مولوی کا لقب، نام. آخوند مدارس یا دینی اداروں میں پڑھانے والا استاد ہوتا ہے. سندھ میں خاص طور آخوند اس استاد کو کہا جاتا ہے جو قرآن کی اور دوسرے دینی امور کی تعلیم دے. آخوند کے لیے بھی پرہیزگار، نیک، متقی، صاف کردار اور دین کے بارے میں علم رکھنا ضروری ہے.
آخوند درویزہ آپ سب سے پہلے اس وقت کے بہت بڑے عالم مصر احمد کی خدمت بابرکت میں بطور شاگرد پیش کئے گئے۔ مولانا مصراحمد جناب سید محمود صاحب بخاری ولی کامل کی اولاد سے تھے۔ انھوں نے درویزہ صاحب کو اپنے مکتب میں داخل کر کے اسباق میں مصروف کر دیا۔ پہلے سال میں قرآن مجید یاد کیا، چند ابتدائی کتابیں پڑھیں ۔ دوسرے برس متوسط کتابیں پڑھ لیں، آپ کا قوت حافظہ اتنا مضبوط تھا کہ آپ جو کتاب پڑھتے ازبر ہوجاتی۔اس کے بعد مزید علم کے حصول کے لئے آپ مولانا جمال الدین ہندوستانی کے پاس حاضر ہوئے ۔ ان کی خدمت میں رہ کر علوم ظاہری سے آراستہ ہوگئے ۔ آپ تقریباً سات برس ان کے پاس رہے۔
آخوند درویزہ افغانوں کے شیخ کامل بن گئے ہو۔ مگر ارشاد فرمایا
آخوند درویزہ آخوند درویزہ کا وصال 1048ھ میں ہوا۔ ان کا مزار پشاور سے مشرق کی طرف ایک میل کے فاصلہ پر واقع ہے اور مرجع عوام ہے ۔ آپ کے مزار کے گرد میلوں میں پھیلا ہوا قبرستان بھی آپ کے نام سے موسوم ہے ۔
آخوند درویزہ علوم متداولہ سے فراغت حاصل کر کے نے بعد حصول معرفت میں کوشاں ہوئے۔ آپ خود فر ماتے ہیں ، روحانی بے قراری اور بے چینی بہت پریشان کرتی، اور حصول علم کے بعد بھی اطمینان قلب میسر نہ تھا۔ آپ نے اس وقت کے ایک جامع شریعت و طریقت عالم جناب ملا سنجر کی خدمت میں اپنی اس پریشانی کا اظہار کیا۔ حالانکہ اس وقت آپ کے بیسیوں شاگرد تھے اور آپ کے علم و فضل کا کافی شہرہ ہو چکا تھا۔ جناب ملاسنجر ، جناب آخوند صاحب کو لے کرشیخ الاسلام و المسلمین جانشین غوث الاعظم جناب سید علی ترمذی المشہور پیر بابا کی خدمت میں حاضر ہوئے ۔ جناب آخوند نے اپنے علم ، زہد ، ریاضت اور عبادت کا تمام حال عرض کیا اور ساتھ ہی اپنی پریشانی کا بھی تذکر ہ کیا۔ جناب پیربابا صاحبؒ نے متبسمانہ انداز میں فرمایا۔